پنجاب میں گاڑیوں کی رجسٹریشن بک ختم

پنجاب میں گاڑیوں کی رجسٹریشن بک ختم کر دی گئی، محکمہ ایکسائز پنجاب نے روایتی رجسٹریشن بک ختم کرکے اسمارٹ کارڈ متعارف کروا دیے۔ تفصیلات کے مطابق پنجاب کو اسمارٹ صوبہ بنانے کے سلسلے میں ایک اور اہم قدم اٹھایا گیا ہے۔ محکمہ ایکسائز پنجاب کی جانب سے صوبے بھر میں گاڑیوں کی رجسٹریشن بک ختم کردی گئی ہے۔
محکمہ ایکسائز پنجاب نے روایتی رجسٹریشن بک ختم کرکے اسمارٹ کارڈ متعارف کروا دیے ہیں۔ پنجاب کے محکمہ ایکسائز نے گاڑیوں اور موٹر سائیکلوں کی روایتی رجسٹریشن بک ختم کرتے ہوئے سمارٹ کارڈ کا اجرا شروع کر دیا ہے۔ محکمہ ایکسائز کے اس فیصلے کے تحت موٹر سائیکل اور گاڑی کے کارڈ کی یکساں فیس مقرر کی گئی ہے۔ اب پنجاب کے شہری محض 530 روپے میں اپنی گاڑی یا موٹرسائیکل کیلئے سمارٹ کارڈ کی سہولت حاصل کر سکیں گے۔

یہ سہولت صرف نئی گاڑیوں یا موٹرسائیکل خریدنے والے شہریوں کیلئے نہیں ہوگی۔ پنجاب کے محکمہ ایکسائز نے اعلان کیا ہے کہ شہریوں کی گاڑیوں اور موٹرسائیکلوں کی پرانی رجسٹریشن بک بھی سمارٹ کارڈ میں تبدیل ہو سکتی ہے۔ شہری اپنی گاڑی یا موٹرسائیکل کی پرانی رجسٹریشن بک واپس کرکے اسے اسمارٹ کارڈ میں تبدیل کروا سکتے ہیں۔ محکمہ ایکسائز کے اس فیصلے کو پنجاب کے شہریوں نے خوش آئند قرار دے دیا ہے۔
محکمہ ایکسائز پنجاب کی جانب سے کل سے سیکیورٹی فیچرز سے آراستہ اسمارٹ کارڈز جاری کرنے کا سلسلہ شروع کیا جائے گا۔ اس حوالے سے ڈائریکٹر ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن راولپنڈی چوہدری سہیل ارشد نے بتایا ہے کہ نئے وہیکل رجسٹریشن سسٹم منصوبے میں رجسٹریشن بک کی جگہ سمارٹ کارڈ ،جدید سیکورٹی فیچرز کی حامل کیمرا ریڈایبل نمبر پلیٹس اور یونیورسل نمبر کا اجراء شامل ہے ۔
صوبے میں نئی نمبر پلیٹس کے اجراء کی تجویز ایکسائز ڈیپارٹمنٹ اور پنجاب سیف سٹی پراجیکٹ نے دی تھی تاکہ تبدیل شدہ ،نئے فونٹ کی اور یونیورسل نمبر کی حامل نمبر پلیٹس جاری کی جاسکیں اور انہیں کیمرا ریڈ ایبل بنایاجائے ۔انہوں نے بتایاکہ قبل ازیں نمبر پلیٹس سیف سٹی پراجیکٹ کے سی سی ٹی وی کیمرہ سے ریڈ ایبل نہیں تھیں جس کی وجہ سے سیکورٹی مسائل کے پیش نظر نئے وہیکل رجسٹریشن سسٹم کی ضرورت تھی ۔
انہوں نے بتایاکہ پنجاب حکومت نے صوبہ بھر میں نیا وہیکل رجسٹریشن سسٹم متعارف کرادیا ہے ۔انہوں نے کہاکہ نئے وہیکل رجسٹریشن نظام کی بدولت نہ صرف یہ کہ گاڑیوں کے کاغذات میں جعلسازی کی حوصلہ شکنی ہو گی اور گاڑیوں کی رجسٹریشن کا نظام مربوط ہو گا بلکہ اس سے صوبہ بھر کے کسی بھی ضلع میں ایک جیسے نمبر کی دوسری گاڑی کی موجودگی کا احتمال بھی ختم ہو گا ۔
انہوں نے قومی خبر ایجنسی کو مزید بتایاکہ یونیورسل نمبر سسٹم کے اجراء سے تمام چھوٹے بڑے اضلاع میں گاڑیوں کی نمبر پلیٹ کی بدولت حاصل ہونے والی اہمیت یکساں ہو جائے گی ،لاہور اور راولپنڈی پر رجسٹریشن کے بوجھ میں کمی آئے گی اور دیگر چھوٹے اضلاع کو بھی ریونیو حاصل ہو گا جبکہ اس سے کرپشن کا بھی خاتمہ ہو سکے گااور جرائم کے دوران گاڑیوں کی جعلی نمبر پلیٹس کا ازخود خاتمہ ہو جائے گا۔
نئے وہیکل رجسٹریشن سسٹم کی بدولت گاڑی مالکان صوبے کے کسی بھی ضلع میں ٹوکن ٹیکس کی ادائیگی کروا سکیں گے اور گاڑی کے رجسٹریشن کے ضلع سے رابطہ کی ضرورت نہیں ہو گی ۔ایک سوال کے جواب میں ڈائریکٹر ایکسائز نے بتایاکہ قبل ازیں ہر ضلع کے کمپیوٹر سرور میں ایک ہی ضلع کی گاڑیوں کے ریکارڈ کی وجہ سے ایسا ممکن نہ تھا ۔اب صوبے بھر کے تمام اضلاع کو باہم مربوط کرتے ہوئے تمام ڈیٹا سنٹرلائزڈ کر دیا گیاہے جس سے تمام ڈیٹا ایک ہی سرور پر دستیاب ہو گا ۔
نئے نظام کے تحت رجسٹریشن بک کی جگہ 6سے زائد سیکورٹی فیچرز کا حامل سمارٹ کارڈ جاری کیا جائے گا جس میں موجود الیکٹرونک چپ پر گاڑی کی خرید ،فروخت اور مالک کے بارے میں تمام تر معلومات دستیاب ہوں گی۔اسسٹنٹ ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن آفیسر سہیل شہزاد کے مطابق مینوئل رجسٹریشن بک کی حامل گاڑی مالکان کو بھی بتدریج سمارٹ کارڈ کے حصول کی سہولت فراہم کر دی جائے گی ۔ محکمہ ایکسائز پنجاب کو دی جانے والی مشینوں کی روزانہ 22000کارڈز بنانے کی استعداد کار ہے جبکہ ایکسائز پنجاب کو روزانہ کی بنیاد پر صرف 8000سمارٹ کارڈز کی ضرورت ہو گی ۔ ذرائع نے بتایاکہ سمارٹ کارڈ کی قیمت محض 530روپے رکھی گئی ہے اور یہ سمارٹ کارڈ متعلقہ گاڑی مالک کو براہ راست گھر کے پتے پر بھجوایا جائے گا۔

اپنے دوستوں کے ساتھ شیئر کریں

یہ بھی پڑھیے

Leave a Comment