کرتارپور کی گگلی پاکستان کو بھی اور سکھوں کو بھی مہنگی پڑے گی۔ رانا ثناءاللہ کا بڑا بیان

رانا ثنا اللہ کو کرتار پور بارڈر کھلنے سے خطرے کی بو آنے لگی۔رانا ثنا اللہ کا کہنا تھا کہ ۔تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز وزیراعظم عمران نے ضلع نارووال کے علاقے کرتارپور میں قائم گردوارا دربار صاحب کو بھارت کے شہر گورداس پور میں قائم ڈیرہ بابا نانک سے منسلک کرنے والی راہداری کا سنگِ بنیاد رکھا۔
گوردوارہ کرتار صاحب پر کرتارپور کوریڈور کے سنگ بنیاد کی تقریب میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، وزیر اطلاعات و نشریات چوہدری فواد حسین سمیت وفاقی وزراء ،ْآرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ، گورنر پنجاب چوہدری سرور، وزیراعلیٰ عثمان بزدار ،ْبھارتی وفد، مختلف ممالک کے سفارتکار اور عالمی مبصرین بھی شریک ہوئے۔تقریب میں بھارتی وزیر ہرسمرت کور، ایچ ایس پوری، نوجوت سنگھ سدھو موجود تھے۔

اس موقع پر جذباتی مناظر بھی نظر آئے ، وہاں موجود سکھ کمیونٹی کے افراد بھی موجود تھے جن کی آنکھوں میں 70 سال کی چھپی پیاس آنسو کی صورت میں ظاہر ہوئی۔اس اقدام کو دنیا بھر میں رہنے والے سکھوں کی جانب سے انتہائی محبت بھرے انداز میں دیکھا جارہا ہے تاہم مسلم لیگ ن کے رہنما رانا ثنااللہ کو اس اقدام سے خطرے کی بو آرہی ہے۔انکا کہنا تھا کہ بینظیر ، نوازشریف نے بھی سکھ برادری کےمطالبے پر اس راہداری کی کوشش کی تھی۔چاہیے تھا کہ دونوں ریاست اس راہداری پر بات کرتیں۔یہ عمل سفارتی حوالے سے انتہائی نامناسب عمل ہے۔انکا کہنا تھا کہ ریاست کیا کبھی ریاست کو چھوڑ کر فرد کے ساتھ فیصلے کرتی ہے۔کرتارپور کی گگلی پاکستان کو بھی اور سکھوں کو بھی مہنگی پڑے گی۔

اپنے دوستوں کے ساتھ شیئر کریں

یہ بھی پڑھیے

Leave a Comment