تحریک لبیک کی پارٹی خطرے میں پڑ گئی۔ پارٹی پر پابندی لگنے کا امکان! ایسا کیوں ہونے جا رہا ہے ؟ بڑی خبر

تحریک لبیک کی پارٹی خطرے میں پڑ گئی۔ پارٹی پر پابندی لگنے کا امکان! ایسا کیوں ہونے جا رہا ہے ؟ بڑی خبر
تحریک لبیک پر پابندی لگنے کا امکان، انتخابی اخراجات کی تفصیلات الیکشن کمیشن میں جمع کروا ئیں نہ ہی فنڈنگ کی، الیکشن کمیشن نے رپورٹ سپریم کورٹ میں جمع کروا دی۔ تفصیلات کے مطابق فیض آباددھرناکیس میں الیکشن کمیشن نے جواب سپریم کورٹ میں جمع کروا دیا ہے۔ ہفتے کے روز سپریم کورٹ میں کروائے گئے جواب میں کہا گیا ہے کہ تحریک لبیک نےانتخابی اخراجات کی تفصیلات الیکشن کمیشن میں جمع کروا ئیں نہ ہی فنڈنگ کی۔
تحریک لبیک پاکستان کو اس سلسلے میں نوٹس بھی جاری کیا جا چکا ہے۔
الیکشن کمیشن نے بتایا ہے کہ تحریک لبیک نے 23 مارچ2017 کو پارٹی رجسٹر کرانے کی درخواست الیکشن کمیشن کودی۔
درخواست موصول ہونے کے بعد الیکشن کمیشن کی سکروٹنی کمیٹی نے پولیٹیکل پارٹیز آرڈر 2002 کے تحت تحریک لبیک کو رجسٹر کیا۔ تحریک لبیک پارٹی مرکزی امیر حافظ خادم حسین رضوی کے نام پر رجسٹرڈ ہے۔
مزید بتایا گیا کہ تحریک لبیک پاکستان نے اس نام پر اعتراض کرتے ہوئے استدعا کی کہ پارٹی کو تحریک لبیک یارسول اللہ کے نام سے رجسٹر کیا جائے۔ تحریک لبیک نے 2000 پارٹی کارکنوں کی فہرست اور2 لاکھ روپے فیس بھی جمع کروائی۔ خادم رضوی نے بیان حلفی جمع کروایا کہ کسی بھی غلط اورغیرقانونی ذرائع سے پارٹی کوفنڈنگ نہیں ہوتی۔ لیکن 60 روز بعد بھی تحریک لبیک پارٹی فنڈنگ کی تفصیلات الیکشن کمیشن کو جمع نہیں کرواسکی۔
تحریک لبیک پاکستان کو اس سلسلے میں نوٹس بھی جاری کیا جا چکا ہے۔ تاہم تاحال اس نوٹس کا کوئی جواب نہیں دیا گیا۔ اس حوالے سے قانونی ماہرین کا کہنا ہے کہ تحریک لبیک کے کئی معاملات درست نہیں ہیں، اسی باعث ممکنہ طور پر اس جماعت پر پاکستان کی سیاست میں حصہ لینے پر پابندی لگ سکتی ہے۔

اپنے دوستوں کے ساتھ شیئر کریں

یہ بھی پڑھیے

Leave a Comment