دوسروں کو جیل بھیجنے والے کے اپنے سر پر جیل کی تلوار منڈلانے لگی / وزیر اطلاعات فواد چوہدری کو کیوں نہ جیل بھیج دیں /چیف جسٹس کا بڑا بیان

آئی جی اسلام آباد تبادلہ کیس میں سپریم کورٹ نے فواد چوہدری اور اعظم سواتی کو طلب کرلیاہے، چیف جسٹس نے کہا فواد چوہدری کا بیان غیر مناسب تھا ، کیوں نہ ایسی بات کرنے والے منسٹر کو توہین عدالت میں جیل بھیج دیں. تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں چیف جسٹس ثاقب نثار کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے وزیراعظم کے احکامات پر آئی جی اسلام آباد کے تبادلے کے معاملے پر ازخود نوٹس کیس کی سماعت کی.
چیف جسٹس نے کہا گزشتہ روزوزیراطلاعات نے ایک بیان دیاہے، فوادچوہدری نے وہ بیان دیا، جس کاان کوعلم بھی نہیں تھا،فواد چوہدری کا بیان غیرمناسب تھا، کیوں نہ وزیراطلاعات کو بھی بلالیا جائے.

چیف جسٹس کا ریمارکس میں کہنا تھا کہ وزیرکیسے کہہ سکتاہے چیف ایگزیکٹو منسٹر کا فون سننے کے ہم پابند ہیں، کل مقدمے کیلئے کوئی وزیرفون کرے اور کہے ہم فون سننے کے پابند ہیں، کیوں نہ ایسی بات کرنے والے منسٹر کو توہین عدالت میں جیل بھیج دیں، فواد چوہدری کو ابھی بلائیں ان کے آنے کے بعد کیس سنیں گے.

جسٹس ثاقب نثار نے کہا کوئی شک نہیں وزیراعظم ملک کے چیف ایگزیکٹوہیں، یہ بات درست ہوگی جان محمدنگراں حکومت کے تعینات کردہ آئی جی ہیں. عدالت نے وفاقی وزراءفواداد چوہدری اوراعظم سواتی کی طلبی کے نوٹس جاری کرتے ہوئے انہیں وضاحت پیش کرنے کے لیے طلب کرلیا ہے. خیال رہے عدالت نے آج سیکرٹری اسٹیبلشمنٹ کو تبادلے سے متعلق تفصیلی جواب جمع کرانے کاحکم دے رکھا ہے.

اپنے دوستوں کے ساتھ شیئر کریں

یہ بھی پڑھیے

Leave a Comment