ایگزٹ جعلی ڈگری کیس ،شعیب شیخ نے سپریم کورٹ میں ہی پکڑے جاناہے،شعیب شیخ نے ملک کی بہت بدنامی کی،چیف جسٹس کے ریمارکس

سپریم کورٹ میں ایگزیکٹ جعلی ڈگری کیس کی سماعت ہوئی ۔عدالت نے کراچی ٹرائل کورٹ کو 6 ہفتے میں فیصلے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ ٹرائل کورٹ نے فیصلہ نہ کیاتووضاحت دینی پڑے گی۔

چیف جسٹس نے کیس میں ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ شعیب شیخ نے سپریم کورٹ میں ہی پکڑے جاناہے،شعیب شیخ نے ملک کی بہت بدنامی کی۔جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ کراچی میں 2015 سے معاملہ زیرالتواہے،تاخیرکیوں ہوئی؟ایگزٹ کے وکیل بشیرمیمن نے کہا عدالت کے روبرو کہاکہ تفتیشی افسر نے بیان ریکارڈکرادیا ہے۔چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ شعیب شیخ کاٹرائل سپریم کورٹ ہی میں ہوگا۔ڈی جی ایف آئی نے کہاکہ پشاورمیں کیس کاٹرائل ہی نہیں ہونے دیاگیا۔

ڈپٹی اٹارنی جنرل نے عدالت کے روبرو کہا کہ 4 کیس ہیں،2 کراچی،ایک اسلام آباداورپشاورمیں ہے۔ ڈی جی ایف آئی اے نے کہا کہ اسلام آبادوالے کیس میں سزامعطل ہوگئی،چیف جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ سزامعطلی کا تو رواج ہی بن گیا۔ڈی جی ایف آئی اے سے مکالمہ کرتے ہوئے جیف جسٹس نے کہا کہ آپ نے سزامعطل کرادی؟عدالت نے دوسرے کیس میں ٹرائل عدالت کو 3 ماہ میں فیصلہ کرنے کا حکم دیتے ہوئے سماعت بدھ تک ملتوی کر دی۔

اپنے دوستوں کے ساتھ شیئر کریں

یہ بھی پڑھیے

Leave a Comment