شہباز شریف کو کس طرح رکھا گیا اور کیا دیکھا انہوں نے سب بتا دیا

مجھے اس کی کوئی پرواہ نہیں کہ وہاں 24گھنٹے تالے لگے رہتے ہیں اور وہاں سورج کی روشنی بھی آتی مجھے اس کی کوئی پروا نہیں ہے وہاں ہوا کا گذر نہیں کوئی پرواہ نہیں لیکن پرسوں جب میں نے دیکھا کہ وہ لوگ بزرگ کسی کے ہاتھ میں سوٹی ہے کوئی بچارہ ٹھیک نہیں چل پا رہا تھا تو میں حیران رہ گیا وہاں پر وائس چانسلر سے لےکر ٹیچر سے لے کر ان کو ہتھکڑیاں لگائی گئیں سیاستدان تو شاید یہ سختیاں برداشت کرتا ہے تو کرتاہے گا تمام سیاستدان ہے اس کے بغیر اس ملک میں ہو بھی سکتی لیکن وہ اساتذہ کرام ہمارے سروں کے تاج جنہوں نے اپنے عہدے سے بچوں کو پڑھایا اور پاکستان کا نام بلند کیا ان کو ہتھکڑیاں لگی تھی ہماری نسلیںسنوارنے والوں کو ہتھکڑیاں لگائی گئیں

اپنے دوستوں کے ساتھ شیئر کریں

یہ بھی پڑھیے

Leave a Comment