چیف جسٹس وزیراعظم عمران خان سے سخت ناراض

چیف جسٹس وزیراعظم عمران خان سے سخت ناراض

ڈی پی او پاکپتن تبادلہ کیس: وزیرِاعلیٰ اور سابق آئی جی پنجاب کو تحریری معافی نامہ جمع کروانے کا حکم

یر کو سماعت کے دوران چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم یہ کہتے ہیں کہ جب تک پی ٹی آئی کی حکومت ہو گی پنجاب کے وزیراعلیٰ عثمان بزدار ہی ہوں گے۔

میاں ثاقب نثار کا کہنا تھا کہ وزیراعلیٰ پنجاب اپنے دفتر میں بیٹھ کر اختیارات کا ناجائز استعمال کر رہے ہیں، تو کیا ایسا ہوتا ہے نیا پاکستان جس کا دعویٰ پی ٹی آئی کی حکومت اقتدار میں آنے سے پہلے کرتی رہی ہے۔

چیف جسٹس کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے سماعت کے دوران نیکٹا کے کوارڈینیٹر خالق داد لک کی طرف سے جمع کروائی گئی تحقیقاتی رپورٹ پر وزیراعلیٰ پنجاب اور وزیراعظم عمران خان کی اہلیہ کے بچوں کے مبینہ گارڈیئن احسن جمیل گجر کے اعتراضات کو مسترد کر دیا۔

سماعت کے دوران ایڈووکیٹ جنرل پنجاب احمد اویس نے کہا کہ انکوائری افسر کی رپورٹ مبہم ہے جس پر چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ آپ کی نظر میں اصل حقائق وہ ہیں جو پنجاب پولیس کے سابق سربراہ کلیم امام نے اپنی رپورٹ میں لکھے تھے۔

بینچ کے سربراہ نے احمد اویس کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ کیسے عدالت عظمیٰ کی طرف سے تحقیقات کے لیے مقرر کردہ افسر کی رپورٹ کو ایک ربڑ سٹیمپ قرار دیا جا سکتا ہے۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ آپ ایک ذمہ دار افسر کے خلاف اس طرح کی زبان کیسے استعمال کر سکتے ہیں۔

بینچ کے سربراہ کا کہنا تھا کہ عدالت قانون کی حکمرانی کے لیے کام کرریی ہے جبکہ بینچ کے رکن جسٹس اعجاز الااحسن نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ جواب میں انکوائری افسر خالق داد لک پر براہ راست حملہ کیا گیا ہے۔

بینچ کے سربراہ نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ ’کیا ایک ڈی پی او اتنا پلید ہوگیا کہ وزیر اعلی پنجاب نے کہا کہ صبح اس کی شکل نہیں دیکھو ں گا۔‘

پنجاب کے ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل کا کہنا تھا کہ اس معاملے میں کوئی بدنیتی نہیں تھی جس پر چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ عدالت کو تو بدنیتی نظر آ رہی ہے اور اگر وزیر اعلی پنجاب انکوائری افسر کی رپورٹ سے مطمئن نہیں ہیں تو پھر جے آئی ٹی تشکیل دے دیتے ہیں۔

چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ ’یہاں معافی مانگتے، اپنے کئے پر شرمندہ ہوتے لیکن ایسا نہیں کیا گیا بلکہ الٹا خالق داد کی رپورٹ پر ناراضگی کا اظہار کیا گیا۔‘ انھوں نے ایڈووکیٹ جنرل کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ وہ اس معاملے کو بہت ہلکا لے رہے ہیں۔

اس کے بعد ایڈووکیٹ جنرل پنجاب نے وزیرِاعلیٰ پنجاب کی جانب سے جمع کروایا گیا جواب واپس لے لیا اور کہا کہ وہ وزیراعلی کی طرف سے عدالت عظمیٰ سے غیر مشروط معافی مانگتے ہیں۔

وزیراعظم عمران خان کی اہلیہ بشری بی بی کے بچوں کے مبینہ گاڈرین احسن جمیل گجر کی معافی کو بھی عدالت نے مسترد کر دیا اور کہا کہ وہ کیسے وزیراعلی کے دفتر میں بیٹھ اکڑ کر بیٹھے رہتے تھے۔

پنجاب پولیس کے سابق سربراہ کلیم امام نے عدالت سے غیر مشروط معافی مانگتے ہوئے خود کو عدالت کے رحم وکرم پر چھوڑ دیا تاہم چیف جسٹس نے وزیراعلیٰ پنجاب اور سابق آئی جی پنجاب کو عدالت میں تحریری معافی نامہ جمع کروانے کا حکم دیا ہے۔

اپنے دوستوں کے ساتھ شیئر کریں

یہ بھی پڑھیے

Leave a Comment